جھریوں زدہ کمزور سا اک ہاتھ
جب اس نے رکھا شفقت کے لیے
سر جھٹک کر چل پڑا تنتناتا نکل پڑا
کرتی ہی کیا ہو میرے واسطے؟
جو کرتی ہو فرض ہے تمھارا۔۔۔
وہ یہ سب کہہ کر تیر چلاتا نکل پڑا

ہاتھ تھا وہ ماں کا، پیار تھا وہ ماں کا
اس نے ہنس کر دی دعا
اور کھل گئی کھڑکی ماضی کی
جون جگر سے پال کر، قدم قدم سنبھال کر
آدھی نیند جاگ کر آدھی نیندیں کاٹ کر
گھی سے تر لقمے دیے خود روکھی سوکھی پھانک کر
لخت جگر کو رکھا چھاوں میں
چکر ہی چکر رہا اپنے پاوں میں

ایک ٹک بیٹھی نہیں، روئی نہیں ضبط کرتی رہی
بچے خوش رہیں صدا دن رات محنت کرتی رہی
بس یہی تو اس ماں کی آرزوئیں تھی
ساری زندگی اسی میں کٹ گئی
پھر ایک وقت آیا ماں بچوں میں بٹ گئی۔۔

میں نے دیکھا تھکن رسیدہ آنکھوں میں
موتی سے قطرے جھلملائے ہیں
میں تو بیٹی ہوں درد سمجھ گئی
جا کے سینے سے ماں کے لگ گئی
ماں تو ماں ہی ہے آخر دعا دیتی رہی
میری جھولی خزانوں سے بھرتی رہی۔

Facebook Comments