2018-17 کے دوران جن ایڈمنز اور رائٹرز کی اچھی کارکردگی رہی ان کویہ ایوارڈ دیا جارہا ہے مگر پھر بھی بہت سے لوگ ہیں جن کی کاوشوں کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا۔ ہم نے ان کو ایوارڈ میں منتخب تو نہیں کیا مگر ایسا ہرگز نہیں کہ وہ اچھا نہیں لکھتے۔


ایوارڈ کی ترتیب لگاتے وقت جن باتوں کا خیال رکھا گیا وہ یہ تھیں ۔۔۔
٭ سب سے زیادہ کس نے لکھا
٭بہت اچھا کس نے لکھا
٭ اخبارات میں سب سے زیادہ کس کو جگہ ملی
سچ کہوں تو میرا دل چاہتا کہ کچھ اور ہستیاں بھی ہیں ان کو بھی دیا جانا چاہیےمگر کیا کریں مشاورتی ٹیم کی جانب سے 10 سے زیادہ کی اجازت ہرگز ہرگز نہیں تھی۔ مجبوری اور میری معذوری سمجھیے ۔
میری خواہش ہے کہ آپ سب یوں اچھی کارکردگی دکھاتے رہیں، ہمیں ایک بات پھر بھی یاد رکھنی چاہیے کہ ایوارڈزکے حصول مقصد نہیں رکھیے گا کبھی بھی، ہمارے لیے اپنا مقصد اوراچھے کا جذبہ سامنے ہونا ضروری ہے۔
میری طرف سے، رائٹرز کلب کے ایڈمن پینل اور مشاورتی ٹیم کی جانب سے ایوارڈ اور سال بھر کے پوزیشن ہولڈرز کے ساتھ ساتھ ان تمام ممبرز کو جنہوں نے قلم کو تھاما اور آج ان کا قلم بہتر لکھ رہا ہے خصوصی شاباش۔۔۔ مبارکباد۔۔۔ ڈھیروں دعائیں۔
کبھی مایوس نہیں ہوئیے گا، یہ قلم ہمارا ہتھیار ہے اور ہم اسی سے ہی زندہ رہ سکتے ہیں۔ آڑھے ٹیڑھے حالات سب پر آتے ہیں مگر کبھی اپنے حالات کی وجہ سے قلم کی رفتار سست نہیں کیجیے گا۔
ایڈمن: عارف رمضان جتوئی

Facebook Comments