شاعرہ: بنت عبد الغفور

نازک سی نرم وملائم سی ہوتی ہے بیٹیاں
دکھوں دردوں میں بھی ہنستی ہے ہنساتی ہے بیٹیاں

ماں کی رانی بابا کی شہزادیاں ہوتی ہے بیٹیاں
اوروں کے دکھ درد میں بھی روتی ہے بیٹیاں

دو بیٹیوں کی پرورش پر جنت واجب کر دی رب نے
گھروں میں خوشیوں کا باعث ہوتی ہے بیٹیاں

بیٹیوں کی صورت میں انمول تحفہ دیا رب نے
بیٹوں سے بڑھ کر وفا نبھاتی ہے بیٹیاں

رب ذوالجلال سب بیٹیوں کے نصیب اچھے کرے
جوسب چھوڑ کر سسرال میں بھی ساتھ نبھاتی ہے بیٹیاں

توڑ کر خود کو جو پھر سے بناتی ہے بیٹیاں
قدر نہ جانے کوئی تو پھر بھی صبر سے سہتی ہے بیٹیاں

بڑا انمول بنایا رب نے رشتہ بیٹیوں کا
سسرال میں رہ کر ماں باپ کے گھر کو سہکتی ہے بیٹیاں

خدارا بیٹیوں کی پیدائش کو برا نہ جانو تم
رب کے رحمت بڑھاپے کا سہارا ہے بیٹیاں

بھول کر سسرال کے غم سارے عاجزہ
میکے میں جھوٹی ہنسی ہنس کر ہنساتی ہے بیٹیاں

Facebook Comments