تحریر : صدف نایاب

آج صبح اپنے میاں کو دفتر جانے سے پہلے موزے تلاش کرتے دیکھا۔ تو بے اختیار ہنسی نکل گئی۔ نہیں نہیں، اپنے میاں پہ نہیں۔۔ ان موزوں پر جو ہر گھر میں ایک معمہ بنے رہتے ہیں۔ موزوں کی بھی اپنی ہی ایک کہانی ہے۔ روزانہ صبح سکول اور دفتر جانے والوں کے لیے یہ اچھی ورزش ہے کہ موزے غائب ہو جاتے ہیں، پھر سب مل کر ان کو ڈھونڈتے ہیں۔ مل تو جاتے ہیں مگر ہمیشہ اکیلے ہی ہوتے ہیں۔ اپنی سہیلی کے گھر جانا ہواتو یہ دیکھ کر ہنسی تو آئی ہی ساتھ ساتھ یہ بھی اطمینان ہوا کہ یہاں بھی موزوں کا وہ ہی حال ہے جو ہمارے یہاں ہے۔ یہ بڑا سا شوپر جو بیچارہ اکیلے موزوں پر مشتمل تھا،اللہ جانے ان موزوں کو زمین کھا جاتی ہے یا آسمان۔

مجھے یاد ہے سکول کے زمانے میں ایک وقت میں اچانک موزے بہت غائب ہونے لگ گئے تھے۔ کسی کو سمجھ نہ آئی کہ آخر یہ موزے جا کہاں رہے ہیں؟ پھر ہوا یوں کہ ایک دن ہماری واشنگ مشین کپڑے دھوتے دھوتے رک گئی۔ خیربندے کو بلوایا اس نے جو مشین کا ڈرائر کھولا تو وہ سب موزے جو عرصے سے لاپتاتھے اور ہم ان کی وجہ سے روزانہ اپنی ماما سے ڈانٹ کھاتے تھے۔ وہ ہی ہمارا منہ چڑاتے ہوئے باہر نکل آئے اور ہم غصہ سے انھیں دیکھتے رہ گئے۔

ان موزوں میں آپس میں بڑا ایکا ہوتا ہے اگر ایک گم ہو جائے تو دوسرا بھی ساتھ نہیں دیتااور اگر ایک پھٹ جائے پھر تو دونوں ہی ہمارا ساتھ چھوڑ جاتے ہیں۔ ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ہمارے پاس کہیں سے جالی کے موزے آئے، ہم نے بڑی احتیاطوں سے انھیں رکھا، پہنتے بھی کم کم تھے کہ کہیں پھٹ نہ جائیں۔ تھے بھی بہت خوبصورت اور آئے بھی بہت مہنگے تھے۔ ہم نے اپنی الماری کے نیچے والے خانے میں رکھ دیے۔ اپنی طرف سے حفاظت کا بھرپور انتظام کیا۔ رات کو سونے لیٹے تو کچھ کھڑ کھڑ کی آوازیں آئیں اور ساتھ ہی باریک سی چیں چیں کی آوازیں۔ کچھ کچھ سمجھ تو آگئی تھی مگر پھر بھی لائٹ آن کر کے جو دیکھا تو الماری میں ایک چوہا نظر آیا۔ ہم نے اپنی بہادری دکھاتے ہوئے اسے بھگانے کی کوشش کی کیونکہ جہاں وہ بیٹھا تھا وہیں ہم نے اپنے موزے سنبھال کے رکھے ہوئے تھے۔ کافی دیر کوشش کرتے رہے بالآخر چوہا تو بھاگ گیا مگر ساتھ ہی ساتھ ہمارا جالی کا موزہ بھی اٹھا کہ لے گیا اور ہم بے بسی کہ عالم میں تکتے رہ گئے۔

اس واقعہ کے بعد ہمارے دل پر کیا کیا بیتی وہ تو آپ جان ہی گئے ہوں گے۔ بہرحال رو دوھو کہ اپنے دل کو سمجھا ہی لیا۔ دراصل بات یہ ہے کہ موزے بذات خود معمہ نہیں ہیں۔ بس تھوڑی سی احتیاط کی ضرورت ہے۔ اگر یہ اکھٹے ہی رکھ دیے جائیں اور کوئی نشانی کسی دھاگے سے لگا لی جائے تو تمام ماو¿ں کو آدھا سکون تو ویسے ہی مل جائے گا۔ کیونکہ یہ موزے جہاں بے پنہاں فائدہ مند چیز ہیں وہیں یہ جھگڑوں کا باعث بھی ہیں۔ اوہ! آپ توپریشان ہی ہو گئے۔ جھگڑوں سے مراد یہ بہن بھائیوں کا وہ جھگڑا جس میں یہ میرے ہیں یہ آپ کے ہیں۔ گلابی میرا تھا، نیلا آپ کا تھا۔ اس قسم کے جھگڑے ہیں جنھیں بچاری مائیں ساری عمر سلجھاتی رہتی ہیںاور مشکل الگ کہ موزے الگ الگ کر کہ کیسے رکھیں۔موزے واقعی بڑے کام کی چیز ہیں کیونکہ ان کی گرم سرد روداد آپ کے چہرے پر آنے والی مسکراہٹ کا باعث بنی۔

Facebook Comments